Karachi Photo Blog

Friday, March 02, 2007

Meeting Mushtaq Ahmad Yusufi




Mushtaq Ahmad Yusufi was very kind to talk to me for almost two hours--though, he asked me to turn off the video camera very early in the session. His wife passed away on January 30 after an illness of two and a half years.
He told me he has manuscript of two books he wants to publish soon.
I tried to convince him to visit his fans in India, UK, USA, and Canada.

7 Comments:

At Mon Apr 30, 04:58:00 AM PDT, Anonymous Anonymous said...

An amazing satirist, and an even better person. Pours laughter into the tiniest cracks of our society

 
At Sat May 31, 07:42:00 PM PDT, Anonymous Anonymous said...

Does any one know if Yusufi saheb has published his new book after Aab-e-Gum? Some one met him back in 2006, when the book was almost ready to go to Katib. Thanks!

 
At Sat Dec 27, 07:58:00 PM PST, Anonymous Anonymous said...

Can I know where to read that interview of Yusufi Sb.?

 
At Sat Dec 27, 07:59:00 PM PST, Anonymous Anonymous said...

When these books are available?

 
At Sun Dec 28, 11:11:00 AM PST, Blogger Cemendtaur said...

عزیز نامعلوم
نہ جانے آپ کس انٹرویو کی تلاش کر رہے ہیں۔ خادم کی جو گفتگو مشتاق یوسفی صاحب سے ہوئی تھی، فدوی نے اسے اب تک قلم بند نہیں کیا ہے۔ البتہ چند یادداشتیں ہیں جن کو پھیلا کر کچھ لکھا جا سکتا ہے۔ اس پہ کام کرنے کی تحریک پائوں گا تو کام مکمل کروں گا۔
یوسفی صاحب کی کوئی نئی کتاب منظر عام پہ آئی تو بات ڈھکی چھپی نہیں رہے گی۔ دنیا کو معلوم ہو جائے گا۔
حال میں جنوبی کیلی فورنیا میں بنایا جانے والا ایک ویڈیو یہاں موجود ہے۔

http://www.youtube.com/watch?v=_SCId_6uKiU

سمندطور

 
At Sat Jan 10, 04:54:00 AM PST, Anonymous Anonymous said...

Thanks a lot for your reply and the link. I'm eagerly waiting for that book. I was searching regarding your discussion with Yusufi Sb.

 
At Thu Jan 01, 05:24:00 PM PST, Blogger Cemendtaur said...

عاشقان کلام یوسفی کا انتظار ختم ہوا۔ مشتاق احمد یوسفی کی تازہ ترین کتاب 'شام شعر یاراں' میدان میں اتری ہے۔ یوسفی اردو ادب کی اس بلند منزل پہ ہیں جہاں ان کی نءی کتاب کو ان ہی کی پرانی چار کتابوں کے معیار سے جانچا جاءے گا۔
کتاب کا نام شام شعر یاراں کیوں ہے؟ یعنی یوسفی دوستوں کی صحبت، گفتگو، شعر و شاعری کی کونسی شام یاد کررہے ہیں؟ قوی امکان ہے کہ یوسفی کی شام شعر یاراں کا تعلق فیض کی شام شہر یاراں سے ہے۔ فیض نے اپنی ایک نظم میں شام شہر یاراں سے مہربان ہونے کی التجا کی ہے۔ جب کہ یوسفی اپنی تازہ کتاب میں وہ بہت سی شامیں یاد کررہے ہیں جو شعر یاراں میں گزری ہیں۔
میں ابھی اس کتاب کے پہلے مضمون پہ ہی ہوں۔ پوری کتاب مکمل کر کے تبصرہ کرنے کی جسارت کروں گا۔

 

Post a Comment

Links to this post:

Create a Link

<< Home